2

امریکہ اور اسرائیل غزہ کے مظلوم عوام کی زندگیوں سے کیا چاہتے ہیں؟انسانی ضمیر کہاں ہے؟، آیت اللہ العظمی نوری ہمدانی

  • News cod : 56462
  • 02 جولای 2024 - 15:36
امریکہ اور اسرائیل غزہ کے مظلوم عوام کی زندگیوں سے کیا چاہتے ہیں؟انسانی ضمیر کہاں ہے؟، آیت اللہ العظمی نوری ہمدانی
حضرت آیت اللہ نوری ہمدانی نے امریکی انسانی حقوق کی آٹھویں بین الاقوامی کانفرنس کے نام اپنے ایک پیغام میں کہا ہے کہ دشمن نے غزہ کی پوری سرزمین کو زمین بوس کر دیا ہے۔

وفاق ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق، آیت اللہ نوری ہمدانی نے تہران یونیورسٹی میں آٹھویں بین الاقوامی کانفرنس “رہبر معظم انقلاب اسلامی کے نقطہ نظر سے امریکی انسانی حقوق” کو ایک پیغام جاری کیا ہے۔

پیغام کا متن حسب ذیل ہے؛

بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمنِ الرَّحیمِ

الْحَمْدُ لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِینَ وَ الصَّلَاةُ وَ السَّلَامُ عَلَی سَیِّدِنا وَ نَبِیِّنَا أَبِی ‌الْقَاسِمِ المصطفی مُحَمَّد وَ عَلَی أهلِ بَیتِهِ الطَّیِّبِینَ الطَّاهِرِینَ سیَّما بَقیَّة اللَّهِ فِی الأرَضینَ.

«یَا أَیُّهَا الَّذِینَ آمَنُوا لَا تَتَّخِذُوا الْیَهُودَ وَالنَّصَارَی أَوْلِیَاءَ بَعْضُهُمْ أَوْلِیَاءُ بَعْضٍ وَمَن یَتَوَلَّهُم مِّنکُمْ فَإِنَّهُ مِنْهُمْ إِنَّ اللَّهَ لَا یَهْدِی الْقَوْمَ الظَّالِمِینَ» / (سوره مائده، آیت نمبر 51)

آیت کریمہ عام طور پر مسلمانوں اور اسلامی برادری کی امریکہ اور اسرائیل کے ساتھ پالیسی کو واضح طور پر بیان کرتی ہے جو کہ یہود و نصاریٰ کے ایک حصے کی علامت اور انسانیت پر ظلم و جبر کا مظہر ہیں، لیکن اس حساس صورتحال میں جو اس سے بڑھ کر ہو چکی ہے۔
فلسطین اور غزہ کی مظلوم قوم پر اسرائیل کے وحشیانہ حملوں کے 9 ماہ سے بعض اسلامی ممالک نہ صرف اسرائیل کی حمایت کرنے والے امریکہ کے ساتھ اپنے تعلقات پر نظر ثانی نہیں کرتے بلکہ غزہ کے عوام کی مدد کرنے کے بجائے اسرائیل کو سامان اور سہولیات بھیجتے ہیں۔ دنیا غزہ کے مظلوم عوام کی نسل کشی دیکھ رہی ہے، ہزاروں معصوم بچے ناحق موت کے منہ میں چلے گئے اور غزہ کے بے گھر لوگوں کے چالیس ہزار سے زائد افراد شہید اور ایک لاکھ سے زائد افراد زخمی اور معذور ہوئے اور تقریباً 20 لاکھ افراد زخمی ہوئے۔ کھنڈرات سے بے گھر ہونے والوں کے پاس نہ تو پینے کا پانی ہے اور نہ ہی خوراک، اور صہیونی اشرافیہ کے تحت بین الاقوامی امداد معمولی طور پر تقسیم کی جاتی ہے۔

کہاں ہے انسانی ضمیر! الحمد للہ آزادی پسند عوام اور عالمی رائے عامہ فلسطین میں امریکہ و اسرائیل کے مظالم اور جرائم سے آگاہ ہو چکی ہے اور آج یورپ و امریکہ کے اہم ترین سائنسی مراکز اور یونیورسٹیاں مظاہروں کی آماجگاہ بنی ہوئی ہیں۔ فلسطینیوں کی حمایت میں اور صہیونیوں کے جرائم کی مذمت، لیکن امریکہ اور اسرائیل کا ایک دوسرے کے سامنے ہتھیار ڈالنا ہے۔

جس کا مطلب یہ ہے کہ صیہونی چاہے کتنے ہی لوگوں کو قتل کر دیں۔ انسانیت کے خلاف جرائم کا ارتکاب کرتے ہیں، امریکہ اور اسرائیل کے درمیان دوستی کا بندھن ہمیشہ قائم رہتا ہے اور اس کے مطابق امریکہ ہی وہ مجرم ہے جو سلامتی کونسل اور اقوام متحدہ کو غزہ میں جنگ بندی کی قراردادیں جاری کرنے سے روکتا ہے اور غزہ میں جنگ بندی کا نفاذ ہوتا ہے۔ اسرائیلی حکومت یکے بعد دیگرے لیس اور مسلح ہے۔ امریکہ اور اسرائیل مظلوم فلسطینی قوم کی زندگیوں سے کیا چاہتے ہیں؟

انہوں نے غزہ کی پوری زمین کو زمین بوس کر دیا ہے اور ماہرین کے مطابق وہ اب تک ہیروشیما میں استعمال ہونے والے چار ایٹم بموں کے حجم کے برابر دھماکے اور تباہی کر چکے ہیں، جنہیں وہاں کی تعمیر نو اور جدید کاری میں دسیوں سال لگ سکتے ہیں۔ لیکن مظلوم عوام آج بھی خون کے پیاسے ہیں، آئی ڈی پیز کھنڈرات میں ہیں، یہ مظالم پوری دنیا نے دیکھے اور غزہ کے لوگوں جیسا ظلم کسی قوم نے نہیں کیا۔ دنیا میں امریکی مظالم اور جرائم کے اتنے زیادہ واقعات ہیں کہ ان کی فہرست ایک ملاقات میں ممکن نہیں! جاپان اور افریقی صحرا سے لے کر شمالی و جنوبی امریکہ تک، پوری دنیا میں اور اسلامی ممالک جیسے عراق، افغانستان، یمن، میں امریکیوں کی وحشیانہ بمباری اور ہزاروں لوگوں کی ہلاکتوں کو پوری دنیا کے عوام نے دیکھا ہے۔ شمالی افریقہ اور دیگر علاقے۔ لیکن آج غزہ کے عوام کی مظلومیت کی آواز سب سے بلند ہے اور ہم امید کرتے ہیں کہ وَسَیَعْلَمُ الَّذِینَ ظَلَمُوا أَیَّ مُنقَلَبٍ یَنقَلِبُونَ خدا کا وعدہ جلد پورا ہوگا اور ظالموں اور جابروں کو ان کے مجرمانہ اعمال کی سزا ملے گی۔

ملت ایران اور اسلامی جمہوریہ پر امریکہ کے بڑے شیطان کا ظلم ہمیشہ مختلف شکلوں میں جاری ہے۔ ایک دن میں کوردل کے منافقین کی حمایت اور مسلح ہونے سے ہمارے مظلوم عوام کے 17000 سے زیادہ لوگ شہید ہو گئے اور یقیناً 7 تیر اور 8 شهریور جیسے بڑے دھماکوں میں مظلوم شہید آیت اللہ جیسے عظیم لوگ شہید ہو گئے۔ ڈاکٹر بہشتی اور وزیر اعظم رجائی اور باقی شہداء نے اس قوم اورملک کے بہت سے خادموں کو قتل کیا اور منافقین کے ایران سے فرار ہونے کے بعد انہیں عراق، فرانس کے اڈوں میں اپنی حفاظت میں رکھا۔ ، اور یہ منافقین اب بھی امریکہ کے مجرم سپاہی ہیں۔ انٹرنیشنل امریکن ہیومن رائٹس کانفرنس کی تنظیم امریکہ کے انسانی حقوق مخالف رویے کو دنیا میں دکھانے کا موقع ہے اور خاص طور پر اس سال یہ کانفرنس فلسطین اور غزہ کے مظلوم عوام کی آواز بننی چاہیے۔

رہبر معظم انقلاب کے خط نے دو مرحلوں میں فلسطینی عوام کی حمایت کے معاملے میں امریکہ اور یورپ کے نوجوانوں میں ایک نئی روح پھونک دی ہے۔
دانشوروں کو اس پیغام پر زیادہ توجہ دینی چاہیے۔

مختصر لنک : https://wifaqtimes.com/?p=56462

ٹیگز