1

اسلامی نظریاتی کونسل نے ٹرانس جینڈر ایکٹ کو غیر شرعی قرار دیدیا

  • News cod : 38118
  • 28 سپتامبر 2022 - 8:08
اسلامی نظریاتی کونسل نے ٹرانس جینڈر ایکٹ کو غیر شرعی قرار دیدیا
سینیٹ انسانی حقوق کمیٹی اجلاس میں سینیٹر مشتاق نے ٹرانسجینڈر ترمیمی بل 2021ء پر ترامیم پیش کی تھیں۔ جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق احمد نے تجویز پیش کی کہ کوئی جنس تبدیلی کیلئے نادرا کے پاس جائے تو میڈیکل بورڈ فیصلہ کرے۔

وفاق ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق، اسلامی نظریاتی کونسل نے ٹرانس جینڈر ایکٹ کو غیر شرعی قرار دے دیا۔ اسلامی نظریاتی کونسل کی جانب سے جاری بیان کے مطابق ایکٹ کی کئی شقیں شرعی اصولوں کے ساتھ ہم آہنگ نہیں، ایکٹ نت نئے معاشرتی مسائل پیدا کرنے کا سبب بن سکتا ہے۔ اسلامی نظریاتی کونسل نے خواجہ سراؤں کے حقوق کے تحفظ کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ٹرانس جینڈر ایکٹ کا جائزہ لینے کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دی جائے، یہ کمیٹی خواجہ سراؤں سے متعلق موجودہ قانون کا تفصیلی جائزہ لے، مسئلے کے ہر پہلو کو سامنے رکھتے ہوئے جامع قانون سازی کی جائے۔ چند روز قبل سینیٹ کی انسانی حقوق کمیٹی نے ٹرانسجینڈرز ایکٹ میں سینیٹر مشتاق احمد خان کی پیش کردہ ترامیم اسلامی نظریاتی کونسل بھجوائی تھیں۔ کمیٹی کے مطابق ترامیم سے متعلق اسلامی نظریاتی کونسل سے رائے طلب کی گئی ہے، بل کی بعض شقوں کو قرآن و سنت سے متصادم قرار دیا گیا تھا۔

سینیٹ انسانی حقوق کمیٹی اجلاس میں سینیٹر مشتاق نے ٹرانسجینڈر ترمیمی بل 2021ء پر ترامیم پیش کی تھیں۔ جماعت اسلامی کے سینیٹر مشتاق احمد نے تجویز پیش کی کہ کوئی جنس تبدیلی کیلئے نادرا کے پاس جائے تو میڈیکل بورڈ فیصلہ کرے۔ سینیٹر مشتاق احمد نے کہا کہ اس قانون پر چند اعتراضات ہیں، کچھ ترامیم لایا ہوں، اس قانون میں آپ نے اختیار دیا کہ جینڈر تبدیل کرے، 30 ہزار لوگوں نے جینڈر تبدیل کرنے کیلئے نادرا کو درخواست دی، اگر کوئی جنس تبدیلی کیلئے نادرا کے پاس جائے تو میڈیکل بورڈ فیصلہ کرے۔ انہوں نے کہا کہ اس قانون سے قانونِ وراثت پر اثر پڑ رہا ہے۔ چیئرمین کمیٹی نے پوچھا کہ جب قانون بن رہا تھا، تب اسلامی نظریاتی کونسل سے رائے لی گئی؟ جس پر سینیٹر مشتاق احمد نے کہا کہ اس وقت اسلامی نظریاتی کونسل سے رائے نہیں لی گئی تھی۔ وزارت انسانی حقوق کی جانب سے ترامیم کی مخالفت کی گئی۔ وزارت انسانی حقوق نے کہا کہ معاملہ عدالت میں ہے، اس قانون کو نہ چھیڑا جائے۔ اسلام آباد انتظامیہ نے ترامیم کی حمایت جبکہ خواجہ سرا نمائندگان نے مخالفت کی۔

مختصر لنک : https://wifaqtimes.com/?p=38118