24

علامه بدرالدین الحوثی؛ مفسر قرآن اور تحریف سے مقابلہ کرنے والا مجاہد

  • News cod : 52636
  • 19 دسامبر 2023 - 14:57
علامه بدرالدین الحوثی؛ مفسر قرآن اور تحریف سے مقابلہ کرنے والا مجاہد
علامه بدرالدین الحوثی صاحب کتاب «التیسیر فی التفسیر»، نامور عالم اور مفسروں میں شمار ہوتا ہے جنہوں نے یمن میں قرانی علوم کے شعبے میں شاندار کارنامے انجام دیے ہیں۔

وفاق ٹائمز، یمن کی سرزمین ہمیشہ سے عظیم قرآنی علماء ، عقیدے اور جنگ کے میدانوں میں جنگجوؤں کی آماجگاہ رہی ہے۔ اس تاریخی سرزمین کے بہادر لوگ ہمیشہ فوجی اور مذہبی یلغار کے خلاف کھڑے رہے ہیں اور اس سرزمین کو حملہ آوروں کا قبرستان بنا چکے ہیں۔ یہ جہاد اور مزاحمت بڑی حد تک اس ملک کے لوگوں کی قرآن اور تعلیمات اہل بیت سے واقفیت سے شروع ہوئی ہے۔ حالیہ برسوں میں ہم نے امریکی، سعودی اور اماراتی جارحیت کے خلاف یمنی عوام کی بہادرانہ مزاحمت کا مشاہدہ کیا ہے۔ اس مزاحمت کے دوران انصار اللہ گروپ اور اس کے رہنما کا نام عبدالمالک بدر الدین الحوثی تھا جو مشہور ہوا۔ تاہم اس مزاحمت کا فکری اور قرآنی پس منظر علامہ بدر الدین الحوثی کی آراء اور کوششوں سے جوڑا جا سکتا ہے۔ ذیل کی رپورٹ میں ہم نے یمن کے اس عظیم قرآنی عالم کی سوانح، پس منظر اور قرآنی کاموں کا تعارف پیش کیا ہے۔

شیخ بدر الدین بن امیرالدین بن حسین الحوثی (23 نومبر 1926 – 25 نومبر 2010) کا شمار قرآن کے نامور علماء، مفسرین اور اسکالرز میں ہوتا ہے، جنہوں نے قرآن مجید کے علوم پر بہت اثر ڈالا ہے۔ یمن میں قرآنی علوم کا کورس، خاص طور پر اس ملک کے لوگوں کی سیاسی اور سماجی زندگی پر قرآن کے اثرات میں اس نے یمن میں وہابی فکر کی لہر کا مقابلہ کرنے کے لیے بھی بہت کوششیں کیں اور ایک ایسے دور میں جب یمنی حکومت نے اس فکر کا مقابلہ کرنے کے لیے کوئی اقدام نہیں کیا، علامہ بدر الدین الحوثی ان چند علماء میں سے ایک تھے۔ جنہوں نے اس میدان میں داخل ہو کر بہت سی تصانیف لکھیں اور وہابیوں کے شبہات کا جواب دیا۔

علامہ بدر الدین الحوثی کے علمی اور تعلیمی خدمات پر ایک نظر

علامہ بدر الدین الحوثی 23 نومبر 1936 کو ضحیان شہر میں علماء اور مذہبی حکام کے ایک گھرانے میں پیدا ہوئے۔ وہ یمن میں حزب الحق کے بانی ارکان میں سے ایک ہیں، یمن کی انصار اللہ کے روحانی پیشوا اور شہید حسین بدر الدین الحوثی اور یمن کے موجودہ رہنما عبدالمالک بدر الدین الحوثی رہنما انصار اللہ گروپ کے والد ہے۔

بچپن ہی سے دینی علوم اور قرآن پاک کا مطالعہ شروع کر دیا تھا۔ان کے اہم ترین شیوخ میں سے ہم شیخ امیر الدین الحوثی کا ذکر کر سکتے ہیں، ان کے والد خود ایک عظیم عالم تھے اور ان کے چچا ولی الحسن انکے استاد شمار ہوتے ہیں۔ انہوں نے اپنی کتاب “مفاتیح اسانید الزیدیہ” میں میں انکا زکر کیا ہے، انہوں نے انہیں قرآن پاک اور علم حدیث کی تعلیم دی۔ کچھ عرصہ بعد وہ علمائے دین کی صف میں داخل ہوئے اور درس و تدریس کے منصب پر بیٹھ گئے۔ ان کی موجودگی میں سیکڑوں لوگوں نے حدیث، فقہ اور قرآن سیکھا اور تصنیف میں بھی ان کا کافی ہاتھ تھا۔ ان کے اہم کاموں میں قرآنی علوم، شکوک و شبہات کے جوابات، خاص طور پر وہابی شبہات کے علاوہ فقہ کے میدان میں اجتہاد کام شامل ہیں۔

علامہ بدر الدین حوثی کو عربی زبان و ادب، فقہ، اصول، علوم حدیث، اسلامی تاریخ اور تفسیر کے میدان میں وسیع علم کے ساتھ ایک قابل اعتماد فقیہ، علم دوست اور پیچیدہ عالم قرار دیا گیا ہے۔ دوسری طرف اخلاقی نقطہ نظر سے ان کے لیے بہت سی مطلوبہ صفات درج کی گئی ہیں جن میں تقویٰ، پرہیزگاری، صبر واستقامت، تقویٰ، سچائی، احسان، سخاوت، شجاعت، جرأت، غرور، عاجزی، احسان، عدل، عدل و انصاف وغیرہ شامل ہیں۔ فضائل جن کی دشمن اور دوست سب گواہی دیتے ہیں۔

علامہ بدر الدین الحوثی ان خوبیوں کے ساتھ ایک ایسے عالم تھے جنہوں نے اپنی جان، مال اور قلم سے جہاد کی راہ پر قدم رکھا اور اس راہ میں کسی ملامت سے نہ ڈرے، وہ ایک ایسی شخصیت تھے جس نے اپنی پوری کوشش کی۔ امت اسلامیہ کے اتحاد اور عزت و وقار کی بحالی کے لیے انہوں نے کاوشیں کی اور قرآنی علماء کی ایک نسل کی پرورش کی جس نے بعد میں اس کے راستے کو جاری رکھا تاہم ان کا سب سے اہم اثر ایک نسل کی تعلیم کو سمجھا جا سکتا ہے۔ قرآنی علماء، جسے ان کے شہید بیٹے حسین بدر الدین الحوثی نے “قرآنی راستہ” کے حلقوں سے جاری رکھا۔ وہ نسل جس نے یمن کے صعدہ کے خلاف چھ ظالمانہ جنگوں میں یمن کے عوام کے دفاع میں بڑا کردار ادا کیا۔ اور اب بھی صوبہ یمن کے خلاف امریکہ اور سعودی عرب کی جارحیت اور ناکہ بندی کا مقابلہ کر رہے ہیں۔

علامہ بدر الدین الحوثی کا قرآنی ورثہ

کتاب (التیصر فی التفسیر) علامہ بدر الدین حوثی کی سب سے اہم اور وسیع قرآنی تصانیف سمجھی جا سکتی ہے، جو پورے قرآن پاک کی تفسیر میں سات جلدوں پر مشتمل انسائیکلوپیڈیا ہے۔

جیسا کہ یمن کے انصار اللہ کے موجودہ رہنما عبدالملک بدر الدین الحوثی نے کہا ہے کہ یہ کتاب علامہ کی اہم ترین تصانیف میں سے ایک ہے اور مفید قرآنی تصورات کو آسان اور آسان تشریح کے ذریعے قارئین کے سامنے پیش کیا گیا ہے۔

اس سلسلے میں یمن کے انصار اللہ کے موجودہ رہنما کا کہنا ہے: علامہ بدر الدین الحوثی ایک “معلم، استاد اور اچھے رہنما تھے، جن کے موقف اور الفاظ حق کے دفاع اور وہابیت کی گمراہی اور فتنہ انگیزی کا مقابلہ کرنے کے لیے اور پھر اس کے خلاف کھڑے ہونے اور امریکہ سازشوں کے مقابل استقامت مشہور ہے اور وہ اس راہ میں کھڑا رہا اور اس راہ میں ہر ممکن کوشش کی۔

علامہ بدر الدین الحوثی کا انتقال

علامہ بدر الدین الحوثی 70 سال سے زائد قرآنی افکار اور تعلیمات کے فروغ اور فکری و نظریاتی فتنوں کا مقابلہ کرنے اور نظریاتی جہدوجہد کے بعد بالآخر 25 نومبر 2010 کو 86 سال کی عمر میں دار فانی سے کوچ کرگیے۔

بشکریہ ایکنا نیوز

مختصر لنک : https://wifaqtimes.com/?p=52636

ٹیگز