4

پہلی اسلامی حکومت کے ابتدائی کام

  • News cod : 56056
  • 13 ژوئن 2024 - 13:53
پہلی اسلامی حکومت کے ابتدائی کام
اسلامی حکومت کا مرکز مسجد ہوتا ہے اس کے لئے کسی اور چیز کی ضرورت نہیں ہوتی مسجد میں ہی تمام کام اس زمانے میں کیے جاتے تھے

پہلی اسلامی حکومت کے ابتدائی کا م

آیت اللہ حافظ سید ریاض حسین نجفی

جہاں تک اسلام کا تعلق ہے اسلامی حکومت کا قیام اسی ماہ ربیع الاول میں انجام پایا ،شب یکم ربیع الاول رسول اعظم ؑ نے ہجرت فرمائی مدینے میں تشریف لائے جیسے ذکر کیا تھا سب سے پہلا کام مسلمانوں کے درمیان سلسلہ مواخات ، سلسلہ اخوت قائم کیا اور یہ سلسلہ اخوت شریعت میں اس قدر ممدوح ہے مستحب قرار دیا گیا ہے کہ غدیر کے دن مومنین کرام آپس میں سلسلہ اخوت کریں اس کے لئے باقاعدہ عربی میں ایک صیغہ موجود ہے وہ پڑھیں ،اس کا نتیجہ یہ ہو گا یہ اسی سنت پر عمل کرتے ہوئے نظر آئیں گے جو سنت رسول اعظمؑ نے مدینہ میں تشریف فرما ہونے کے بعد کی تھی۔ اور جب سلسلہ اخوت دو آدمیوں کے درمیان قائم ہو جائے تو دوسرے لوگوں کی بہ نسبت ان کے حقوق زیادہ ہونگے یہ بھائی بھائی بن جائیں گے لہذا ایک دوسرے کا انکو خیال کرنا چاہیے۔
جیسے دیہاتوں میں کسی زمانے میں پگڑی بدلی جاتی تھیں آج کل تو پگڑی ہے ہی نہیں کہ بدلی جائے نہ ٹوپیاں بدلی جاسکتی ہیں نہ رومال بد لیجا سکتے ہیں ٹوپیاں بھی اگر خدانخواستہ مسجد میں نہ ہوتیں تو سرننگے ہو تے ہم جس زمانے میں لوگ مرد پگڑی با ندھا کرتے تھے عورت کے سر پر دوپٹہ ہوتا تھا ۔
اس وقت پگڑی بدل بھائی بڑی اہمیت رکھتا تھا او ر ان کی اولاد یں بزرگوں کی عزت کیا کرتیں تھیں کہ یہ میرے باپ کا پگڑی بدل بھائی ہے بہر حال شریعت میں اس کے لئے صیغہ اخوت ہے جو 18ذوالحجہ غدیر کے دن پڑھا جاتا ہے خواہ انسان اپنے ملک میں ہو یا اگر حج کے لئے گیا ہوا ہے تو پھر اس کی اہمیت او ر بڑھ جاتی ہے بہر حال سلسلہ اخوت قائم کیا گیا تھا اور آج بھی قائم ہے ۔
12ربیع الاول کو پہلا جمعہ پڑھایا اور رسالت مآب ؑ کے مدینہ میں جانے کے بعد پریزیڈنٹ ہاوس بنا وہ کیا تھا مسجد تھی جس کو آج مسجد نبوی کہتے ہیں چونکہ اسلامی حکومت کا مرکز مسجد ہوتا ہے اس کے لئے کسی اور چیز کی ضرورت نہیں ہوتی مسجد میں ہی تمام کام اس زمانے میں کیے جاتے تھے ۔تو جب یہ حکومت قائم ہوئی تو اس حکومت کو کہا گیا اسلامی حکومت ، حکومت اسلامی کی سب سے پہلی اساس سب سے پہلی بنیاد جس پریہ حکومت قائم ہے وہ ہے کلمہ توحید اگر توحید کو ایک طرف کر دیا جائے تو اسلام میں جان نہیں رہتی نہ ہی حکومت اسلامی قائم ہو سکتی ہے ۔

مختصر لنک : https://wifaqtimes.com/?p=56056

ٹیگز