شیعہ علما کونسل

13آگوست
حضرت آیت اللہ حافظ سید ریاض حسین نجفی کا انٹرویو |قسط 3

حضرت آیت اللہ حافظ سید ریاض حسین نجفی کا انٹرویو |قسط 3

میرا پسندیدہ مضمون حفظ قرآن کے بعد قرآن مجید رہا ہے اور تفسیر وغیرہ لیکن زیدہ تر منطق اور فلسفہ کو میں کافی محبت سے پڑھا کرتا تھا

23جولای
شیعہ علماء کونسل پاکستان و زہرا اکیڈمی کے تحت اجتماعی قربانی

شیعہ علماء کونسل پاکستان و زہرا اکیڈمی کے تحت اجتماعی قربانی

اس موقع پر علاقائی عمائدین، مومنین اور علماء کرام نے ہر سال کی طرح امسال بھی اجتماعی قربانی کے اہتمام پر علامہ ساجد نقوی، علامہ شبیر حسن میثمی اور زہرا اکیڈمی کے اراکین اور معاونین کا شکریہ ادا کیا

12جولای
توہین اہلبیت دراصل توہین رسالت ہے، علامہ سبطین سبزواری

توہین اہلبیت دراصل توہین رسالت ہے، علامہ سبطین سبزواری

اہلبیت کی شان میں گستاخی فقط اہل تشیع کا ہی نہیں، پورے عالم اسلام کا مسئلہ ہے۔

22می
مظلوم فلسطینیوں سے اظہار یکجہتی اور اسرائیلی مظالم کے خلاف احتجاجی ریلی

مظلوم فلسطینیوں سے اظہار یکجہتی اور اسرائیلی مظالم کے خلاف احتجاجی ریلی

علامہ سید ساجد علی نقوی کے حکم پہ شیعہ علما کونسل ضلع ساہیوال اور شیعان حیدر کرار ساہیوال کی تمام انجمنوں کی طرف سے مظلوم فلسطینی بھائیوں سے اظہار یکجہتی کے لیے اسرائیلی مظالم کے خلاف احتجاجی ریلی نکالی گئی۔

08می
بیت المقدس امت مسلمہ کی عزت و غیرت کا مسئلہ ہے، شیعہ سنی اتحاد سے بیت المقدس آزاد ہوگا، علامہ سبطین سبزواری

بیت المقدس امت مسلمہ کی عزت و غیرت کا مسئلہ ہے، شیعہ سنی اتحاد سے بیت المقدس آزاد ہوگا، علامہ سبطین سبزواری

شیعہ علماءکونسل شمالی پنجاب کے صدر علامہ سید سبطین حیدر سبزواری نے مسجد علی جامعتہ النجف میں خطبہ جمعہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ فلسطین کی آزادی عالم اسلام کا مشترکہ مسئلہ ہے۔ اس کا کسی مسلک یا ملک سے تعلق نہیں۔اسرائیل کے قبضے سے قبلہ اول کی آزادی مسلمانوں کی غیرت کا تقاضا ہے

04آوریل
علامہ شیخ نوروز علی کے ارتحال کی خبر مدارس دینیہ کے لئے انتہائی غمناک ہے، حجت الاسلام جسکانی

علامہ شیخ نوروز علی کے ارتحال کی خبر مدارس دینیہ کے لئے انتہائی غمناک ہے، حجت الاسلام جسکانی

علامہ شیخ نوروز نجفی ایک طویل مدت تک دین مبین اسلام کی تعلیمات سے سینکڑوں تشنگان علوم قرآن وحدیث کو سیراب فرماتے رہے۔ پوری بابرکت زندگی خدمتِ علم و علماء میں صرف کردی اور اپنے پیچھے ایک عظیم علمی سرمایہ اپنے باکردار شاگردوں اور مدارس دینیہ کی صورت میں چھوڑا ہے۔